519

خیبر پختونخوا کے بغیر خطے کا وجودنامکمل ہے ٗ شوکت یوسفزئی

پشاور۔اللہ تعالیٰ نے ہمیں ایسا خوبصورت اور قدرتی وسائل سے مالامال صوبہ دیاہے جس کے بغیر اس خطے کا وجود نامکمل ہے۔ سنٹرل ایشیاء تک جانے کا زمینی راستہ ہمارے ہی صوبے سے گزرتاہے اس لئے اسکی اہمیت بین الاقوامی ہے ان خیالات کا اظہار خیبر پختونخوا کے وزیر اطلاعات وتعلقات عامہ شوکت علی یوسفزئی نے ایک نجی یونیورسٹی کے پہلے بین الاقوامی ملٹی ڈسپنسری کانفرنس کی افتتاحی تقریب میں بطور مہمان خصوصی خطاب میں کیا۔

کانفرس میں ترکی اور ملیشیاء سے آئے ہوئے پروفیسروں اور وفود نے بھی شرکت کی۔ اپنے خطاب میں وزیر اطلاعات نے کہاکہ صوبے میں گزشتہ 6 سال سے مثالی امن قائم ہے جس کا ثبوت یہ کامیاب بین الاقوامی کا نفرنس ہے جس میں باہر ممالک سے بھی وفود نے شرکت کی ہے۔ یہی وفود باہر کی دنیا کو ہمارے صوبے کا امن کا پیغام دینگے۔ 

باہر سے سرمایہ کاری لانے کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ پوری دنیا سیاحت سے اچھی ریونیو کمارہی کررہی ہے اور ہمارے ملک خاص طور پر خیبرپختونخوا پر قدرت کی مہربانی ہے کہ یہاں سیاحت کے بہت زیادہ مواقع ہیں یہی وجہ ہے کہ پچھلے سال 22 لاکھ لوگوں نے سوات کا رخ کیا جبکہ صوبائی حکومت سیاحت کے فروغ کیلئے ہر سال دو نئے سیاحتی مقامات کھول رہی ہے۔جس سے صوبے میں سیاحت کے مواقع بڑھیں گے جبکہ ان مقامات سے وہاں کے لوگوں کو روزگار کے مواقع بھی ملیں گے۔

صوبے میں بجلی اور آبی ذخائر کے حوالے سے وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ صوبے میں بجلی پوری ہے لیکن پُرانے ٹرانسمشن لائن کی وجہ سے بجلی سپلائی میں مسئلے آرہے ہیں جن کو جلد حل کر ینگے۔ واٹر چینلز نہ ہونے کی وجہ سے پانی ضائع ہو رہا ہے ۔ جبکہ نئے چینلز کے بنانے سے زراعت کے شعبے کو اور بھی مضبوط اور فائدہ مند بنایاجائے گا۔ ملک میں مہنگائی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے شوکت علی یوسفزئی نے بتایا کہ مہنگائی ایک دم نہیں آتی بلکہ یہ پچھلی حکومتوں کے غلط پالسیوں کا نتیجہ ہو تا ہے۔

پچھلی وفاقی حکومت کی غلط پالیسوں پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس وقت ملک تقریباً 30ہزار ارب روپے کا مقروض ہو چکا ہے تاہم اگر یہی30 ہزار ارب روپے ملک پر لگتے تو ہمارا ملک بہت آگے چلا جا چکا ہوتا وزیر اطلاعات نے مزید کہا کہ مشرف دور میں ہر پاکستانی تقر یباً 40 ہزار روپے کا مقروض جبکہ پچھلی وفاقی حکومت میں یہ سوا لاکھ تک پہنچ چکا ہے۔