155

شوبز و کرکٹ ستارے بھی نیوزی لینڈ میں معصوم نمازیوں کی شہادت پر اشکبار

کراچی: نیوزی لینڈ میں دومساجد پر دہشتگردانہ حملے میں 40 سے زائد نمازیوں کی شہادت نے جہاں پوری دنیا کو جھنجھوڑ کررکھ دیا وہیں پاکستانی کرکٹ وشوبز اسٹارز نے بھی حملے کی بھرپور مذمت کرتے ہوئے شدید ناراضی کا اظہار کیا ہے۔

پاکستانی اداکارہ ماہرہ خان نے ٹوئٹر پر کرائسٹ چرچ میں مساجد پر ہونے والے دہشتگرد حملے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے  نیوزی لینڈ کی عوام اور متاثرین کے اہل خانہ کے لیے دعا کی۔

نامور گلوکارواداکار علی ظفر نے بھی واقعے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا مسجد میں دوران عبادت معصوم مسلمانوں کو فائرنگ کرکے شہید کرنے والے شخص کی ویڈیو دیکھی، یہ میری زندگی کی سب سے زیادہ پریشان کرنے والی ویڈیو ہے، دیکھتے ہیں کہ دنیا اسے ’’پرتشدد کارروائی‘‘ کہتی ہے یا ’’دہشتگردانہ کارروائی‘‘۔

اداکارہ ماورا حسین نے بھی کرائسٹ چرچ  میں مساجد پر حملے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا عبادت کرنے کی جگہ پر کوئی کیسے معصوم لوگوں پر حملہ کرسکتاہے ان لوگوں کا تعلق کیسے کسی مذہب سے ہوسکتا ہے۔

اداکارفیصل قریشی نےاس دہشتگردانہ حملے کی پُرزور مذمت کرتے ہوئے کہا دہشتگردوں کا کوئی مذہب نہیں ہوتا۔

قومی ویمن کرکٹ ٹیم کی سابق کپتان ثنا میر نے کہا ہمیں یہ یاد رکھنے کی ضرورت ہے کہ جو لوگ دہشتگردی کا راستہ اپناتے ہیں ان کا تعلق کسی ملک یا مذہب سے نہیں ہوتا، یہ لوگ صرف ڈر، خوف، درد اورزخم پھیلاتے ہیں۔ ثنا میر نے شہدا اوران کی فیملی کے لیے دعا کی۔

پاکستانی کرکٹر سعید اجمل نے بھی واقعے کی پُر زور مذت کرتے ہوئے کہا خدا اس حملے میں شہید ہونے والے تمام افراد کو اعلیٰ مقام عطا فرمائے اور ان کے اہل خانہ کو صبر کی توفیق دے۔

قومی کرکٹر محمد حفیظ نے بھی اس حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کی اورمتاثرین کے اہل خانہ کے لیے دعا کرتے ہوئے کہا دہشتگردی کی کوئی سرحد نہیں ہوتی، ہم سب کو اس عالمی مسئلے پر قابو پانے کے لیے  متحد ہونا ہوگا۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے دنیا کے دوہرے معیار پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ان دہشتگردوں کو ایک بار پھر ’’ذہنی بیمار‘‘ کانام دے دیا جائے گا؟

 

 

 

 

سابق قومی کرکٹر شعیب اختر نے ویڈیو پیغام کے ذریعے واقعے پر مذمت کرتے ہوئے کہا کرائسٹ چرچ کی مساجد میں معصوم نمازیوں پر فائرنگ کی ویڈیو دیکھنا بہت خوفناک تھا۔ کیا ہم عبادت گاہوں میں بھی محفوظ نہیں ہیں؟