511

کالعدم تنظیموں کی معاونت کرنیوالوں کیخلاف کاروائی کا فیصلہ

پشاور۔محکمہ داخلہ خیبر پختونخوا نے 72کالعدم تنظیموں کو عطیات او رصدقات یا ان کے معاونت کرنے والوں کے خلاف کاروائی کا فیصلہ کیا ہے او ر کالعدم یا زیر نگرانی تنظیموں کی معاونت یا مالی امداد کو قابل سزا جرم قرار دیا ہے۔

انسداد دہشت گردی ایکٹ 1997اور اقوام متحدہ کے سیکورٹی کونسل ایکٹ 1948کے تحت قرار دیئے گئے کالعدم یا زیر نگرانی تنظیموں کے کسی بھی قسم کے معاونت ، مالی امداد یا سہو لت فراہم کرنا قانونی جرم قرار دیا ہے محکمہ داخلہ خیبر پختونخوا نے ان 72کالعدم اور زیر نگران تنظیموں کی تفصیلات جاری کردی گئی ہیں اور کہا ہے کہ ان کی معاونت کرنے کی سزاء پانچ سال سے دس سال تک کی قید ، ایک کروڑ روپے جرمانہ یا دونوں ہو سکتے ہیں۔

اس کے علاوہ مجرم کے ذاتی ، منقولہ ، غیر منقولہ جائیداد بھی ضبط کر سکتی ہے ۔ کالعدم یا زیر نگرانی تنظیموں میں محکمہ داخلہ کی جانب سے جاری فہرست میں تحریک طالبان باجوڑ ، امر بالمعروف و نہی المنکر (حاجی نامدار گروپ )تحریک طالبان مہمند ، تحریک طالبان سوات ، طارق گیڈڑ گروپ وغیرہ شامل ہیں۔