172

سلمان خان کے سر پر پھر سے جیل جانے کی تلوار لٹکنے لگی

بولی وڈ دبنگ ہیرو سلمان خان کو گزشتہ برس اپریل میں بھارتی ریاست راجستھان کی عدالت نے 1998 میں فلم ’ہم ساتھ ساتھ ہیں‘ کی شوٹنگ کے دوران نایاب نسل کے کالے ہرن کا شکار کرنے پر 5 سال قید اور 10 ہزار روپے جرمانے کی سزا سنائی تھی۔

عدالت کی جانب سے سزا سنائے جانے کے بعد فوری طور پر سلمان خان کو جیل بھیج دیا گیا تھا اور انہوں نے 2 دن جیل میں گزارے تھے۔

جیل جانے کے بعد اداکار نے فیصلے کے خلاف ریاست راجستھان کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹ میں اپنی سزا کے خلاف فیصلہ دائر کرتے ہوئے درخواست کی ضمانت دی تھی۔

ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن کورٹ نے اپریل 2018 میں ان کی ضمانت منظور کرتے ہوئے انہیں جیل سے رہا کرنے کا حکم دیا تھا۔

بعد ازاں مئی 2018 میں اسی کیس کی سماعت میں سلمان خان خود پیش ہوئے اور عدالت سے باہر جانے کی درخواست بھی کی تھی۔

عدالت نے انہیں فلموں کی شوٹنگ کے لیے بیرون ملک دورے کرنے کی اجازت دیتے ہوئے انہیں آئندہ ایک سال تک ہونے والی سماعتوں میں مستثنیٰ قرار دیا تھا۔

تاہم اب عدالت نے سلمان خان کی دوران سماعت غیر حاضری کی استثنیٰ ختم کرتے ہوئے انہیں آئندہ سماعت میں حاضر ہونے کا حکم دیتے ہوئے واضح کیا ہے کہ دوسری صورت میں ان کی ضمانت منسوخ کردی جائے گی۔

ضمانت منسوخی کے بعد سلمان خان دوبارہ جیل جا سکتے ہیں۔