226

گیس کی قیمتوں میں ایک بار پھر اضافہ 

اسلام آباد۔ آ ئل اینڈ گیس ریگو لیٹری اتھا رٹی (اوگرا) نے گیس کی قیمتوں میں ایک بار پھر اضافے کی منظوری دیدی ہے، جمعہ کواوگرا نے گیس کی قیمتوں میں ایک بار پھر اضافے کی منظوری دیتے ہوئے سوئی ناردرن اور سدرن کے ٹیرف میں اضافے کا فیصلہ وفاقی حکومت کو ارسال کر دیا ہے

اوگرا کی منظوری کے بعد گیس 151 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو مہنگی کی گئی ہے،وفاقی حکومت نے گیس ٹیرف میں مکمل اضافہ 27 ستمبر 2018 کو صارفین پر منتقل نہیں کیا تھا، سوئی سدرن اور سوئی ناردرن نے اوگرا میں ٹیرف پرنظرثانی کی درخواستیں دائر کی تھیں، حکام کا کہنا ہے کہ وفاقی حکومت اوگرا کی جانب سے منظور کردہ ٹیرف صارفین پر منتقل کرے یا سبسڈی دے، ذرائع کے مطابق حکومت نے سبسڈی نہ دی تو گیس کمپنیوں کو 170 ارب روپے سے زائد شارٹ فال کا سامنا کرنا پڑے گا۔دوسری جانب اوگرا نے پیٹرولیم مصنوعات کے بعد ایل پی جی کی قیمت میں بھی 9روپے فی کلو اضافہ کر دیا جس کے بعد گھریلو سلنڈر 95روپے اور کمرشل سلنڈر 409روپے مہنگا ہو گیا۔چیئرمین ایل پی جی ڈسٹری بیوٹرز ایسوسی ایشن پاکستان ،فاؤنڈر ایل پی جی انڈسٹریز ایسوسی ایشن آف پاکستان عرفان کھوکھر نے بتایا کہ بین الاقوامی مارکیٹ میں ایل پی جی کی قیمت میں 9ہزار روپے فی میٹرک ٹن اضافہ ہو گیا جس کے بعد اوگرا نے ماہ مارچ کیلئے ایل پی جی کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا ۔

اب ایل پی جی 9روپے فی کلو اضافے کے بعد 121سے بڑھ کر 130روپے فی کلو ہو گئی ۔گھریلو سلنڈر 95روپے اضافے کے بعد 1428سے بڑھ کر 1523روپے اور کمرشل سلنڈر 409روپے اضافے کے بعد 5495سے بڑھ کر 5902روپے میں فروخت ہو گا ۔عرفان کھوکھر نے کہاکہ حکومت کی بہتر پالیسی اور ایل پی جی امپورٹ پر ٹیکس کے خاتمے کی وجہ سے ملک بھر میں ایل پی جی اوگرا کی مقرر کردہ قیمت سے کم قیمت پر دستیاب ہے ۔

صارفین کو سستی ایل پی جی کی فراہمی کے لئے 30مارچ 2019کو گورنر ہاؤس پنجاب لاہور میں ہونیوالی چوتھی سالانہ انٹرنیشنل انرجی اینڈ ایل پی جی کانفرنس میں پریمیئر بونس (جگا ٹیکس ) کا خاتمہ ،لوکل پیداوارری ایل پی جی کی میرٹ کے لحاظ سے مساوی تقسیم اور غیر معیاری سلنڈر بنانے والے کارخانوں کے خاتمے کی قرار داد منظور کی جائے گی ۔