446

سرکاری املاک پر حملوں کی تحقیقاتی رپورٹ تیار

پشاور۔صوبائی دارالحکومت میں انسداد پولیو مہم کے دوران افواہیں پھیلانے اور سرکاری املاک پر حملوں کی تحقیقاتی رپورٹ تیار کر لی گئی ہے ٗ صوبائی حکومت نے 22اپریل کو پشاور میں انسداد پولیو مہم  کے دوران پیش آنے والے واقعہ کی انکوائری کا حکم دیا تھا۔

 تحقیقاتی کمیٹی نے رپورٹ خیبر پختونخوا حکومت کو ارسال کر دی ہے رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ علاقے کے ناظمین ٗ نجی سکول مالکان اور مقامی مذہبی رہنماؤں کے منفی کردار سے قومی کاز کو نقصان پہنچا  لہٰذا متعلقہ ناظمین ٗ سکول مالکان اور مذہبی رہنماؤں کے خلاف کاروائی کی سفارش کی جاتی ہے انکوائری میں یہ بھی ثابت کیا گیا کہ صوبے اور پشاور میں بچوں کو دی جانے والی پولیوویکسین محفوظ اور معیاری تھی تاہم منفی پروپیگنڈے کی وجہ سے والدین خوف کے باعث بچوں کو ہسپتال لائے اور تقریباً پشاور کے مختلف ہسپتالوں میں 40ہزار بچوں کو لایا گیا۔

 پولیو ڈرامے کے دوران مشتعل مظاہرین نے 3بلدیاتی نمائندوں کے اکسانے پر ماشو خیل بنیادی مرکز صحت کو آگ لگائی اس دوران نجی سکولوں کے مالکان نے بھی منفی کردار ادا کیاانکوائری کمیٹی کی دیگر سفارشات میں 9نجی سکولوں کی رجسٹریشن منسوخ اور ان کے مالکان کے خلاف کاروائی  کرنے ٗ ناظم امجد ٗ نائب ناظم امجد اللہ اور یو سی ناظم کریم کے ساتھ سوشل میڈیا پر منفی پروپیگنڈہ کرنے والے افراد کے خلاف ایف آئی اے کو کاروائی کیلئے بھی کہا گیا ہے۔